تازہ ترین  

فضائلِ درُود شریف
    |     8 months ago     |    اسلامی و سبق آموز
درُود شریف ایک ایسا وظیفہ ہے جو ہر وقت پڑھا جا سکتا ہے اس کی کوئی ممانعت نہیں کہ کس وقت پڑھا جائے اور کس وقت نہ پڑھا جائے ۔اسی طرح درُود پاک پڑھنے کی نہ تو کوئی تعداد مقرر ہے اور نہ وقت بلکہ جب چاہے پڑھے جتنا چاہے پڑھے چاہے درُود پاک دن کے وقت پڑھا جائے چاہے رات کے وقت پڑھا جائے نماز سے پہلے پڑھا جائے یا نماز کے بعد پڑھا جائے دعا سے پہلے پڑھا جائے یا بعد میں پڑھا جائے کھڑے ہو کر پڑھا جائے یا بیٹھ کر پڑھا جائے گویا اس کی کوئی ممانعت نہیں یہ ایسا وظیفہ ہے جس کو انسان ہر گھڑی ہر آن پڑھ سکتا ہے۔ درُود پاک ایک انمول نعمت ہے جس کی فضیلت بے پنا ہ ہے جس کو ہر وقت انسان اپنے دل میں پڑھتا رہے تو اس کے لیے یہ ذریعہ نجات ہے۔اللہ تبارک و تعالیٰ قرآن پاک میں فرماتا ہے۔بیشک اللہ اور اس کے فرشتے درود بھیجتے ہیں اس غیب بتانے والے (نبی)پر اے ایمان والوان پر درُود اور خوب سلام بھیجو(احزاب ۵۶)
اسی طرح احادیث کی روشنی میں درُود پاک کے پڑھنے کی فضیلت یوں بیان ہوتی ہے ۔ حضرت انس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا جس شخص کے سامنے میرا ذکر ہو اس کو چاہیے کہ مجھ پر درود بھیجے اورجو مجھ پر ایک مرتبہ درُود بھیجتا ہے اللہ تعالی اس پر دس مرتبہ رحمت بھیجتے ہیں اور اس کے دس گناہ معاف کر دئیے جاتے ہیں اور اس کے دس درجات بلند کر دئیے جاتے ہیں۔ایک دن حضرت جبرئیل علیہ السلام حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے پاس آئے اور کہا اللہ نے مجھے اتنی طاقت دی ہے کہ میں ساری دنیا کے درختوں کے پتے گن سکتا ہوں اور پانی کے سارے قطرے اور ریت کے سارے ذرے گن سکتا ہوں لیکن اُ س آدمی پر اللہ کی رحمت کی تعداد نہیں گن سکتا جو آپ صلی اللہ علیہ وسلم پر ایک بار درُود پڑتا ہے۔حضرت ابن مسعود رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایاکہ قیامت کے روز وہ شخص میرے سب سے قریب ہو گا جس نے مجھ پر اکثر درُود پاک پڑھا ہو گا۔حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جس نے دن بھر میں مجھ پر ہزار بار درود پاک پڑھا وہ مرے گا نہیں جب تک کہ وہ جنت میں اپنی آرام گاہ نہ دیکھ لے گا۔
حضرت فضالہ بن عبیدہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک دن جب کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم تشریف فرما تھے تو ایک شخص آیا اور اس نے نماز پڑھی پھر اس نے دُعا مانگنا شروع کی یا اللہ مجھے بخش دے اور مجھ پر رحم فرما یہ سن کر حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اے نمازی تو نے جلدی کی ہے لہذا جب تُو نماز پڑھے تو اس کے بعد پہلے اللہ کی حمد وثناء بیان کیا کر پھر مجھ پر درُود پڑھا کر پھر دُعا مانگا کر پھر ایک اور نمازی آیا اس نے نماز پڑھ کر اللہ تعالیٰ کی حمد وثناء کی اور پھر حضور صلی اللہ علیہ وسلم پر درُود پاک پڑھا تو اس پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اے نمازی تُو جو دُعا مانگے گا وہ قبول ہو گی۔حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ مجھ پر درُود پاک پڑھنے والے کو پل صراط پر عظیم نور عطا ہو گا اور جس کو پل پر نور عطا ہو گا وہ اہل دوزخ سے نہ ہو گا ۔حضرت عمر رضی اللہ عنہ روایت کرتے ہیں کہ دعا آسمان اور زمین کے درمیان معلق رہتی ہے اس میں سے کچھ بھی اوپر نہیں جاتا یہاں تک کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی بارگاہ میں ہدیہ درُود پیش نہ کیا جائے۔حضرت علی رضی اللہ تعالی عنہ سے روایت ہے کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا جو مجھ پر ایک بار درود پاک پڑھے اس کے لیے اللہ تعالی ایک قیراط اجر لکھتا ہے اور قیراط اُحد پہاڑ جتنا ہے۔ ایک روایت میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ قیامت کے روز تم میں سے وہ شخص ہر مقام اور ہر جگہ پر میرے زیادہ قریب ہو گا جس نے تم میں سے مجھ پر درُود پاک کی کثرت کی ہو گی اور تم میں سے جو جمعہ کے دن اور جمعہ کی رات مجھ پر درود پاک پڑھے گا اللہ تعالی اس کی سو حاجتیں پوری فرمائے گا ۔ستر حاجتیں آخرت کی اور تیس دنیا کی پھر اللہ تعالی ایک فرشتہ مقرر کرتا ہے جو کہ اس درُود پاک کو لے کر میرے دربار میں حاضر ہوتا ہے جیسے تمہارے پاس ہدیے آتے ہیں اور وہ فرشتہ عرض کرتا ہے حضور یہ درُود پاک کا ہدیہ فلاں اُمتی نے جو فلاں کا بیٹا فلاں قبیلے کا ہے نے بھیجا ہے تو میں اس درُود پاک کو نور کے سفید صحیفے میں محفوظ کر لیتا ہوں۔ایک روایت ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا تم جہاں بھی ہو مجھ پر درُود پڑھو کہ تمہارا درُود مجھ تک پہنچتا ہے۔ایک اور جگہ فرمایا بے شک تمہارے نام بمع شناخت مجھ پر پیش کیے جاتے ہیں لہذا مجھ پر احسن (یعنی خوبصورت الفاظ میں)درُود پاک پڑھو۔مومنو!پڑھتے رہو تم اپنے آقاصلی اللہ علیہ وسلم پر درُود ہے خُدا کا یہ وظیفہ الصلوۃٰوالسلام۔
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ جو مجھ پر درُود پاک پڑھنا بھول گیا وہ جنت کا راستہ بھول گیا۔ تو کیوں نہ ہم ہر وقت اپنے آقاصلی اللہ علیہ وسلم پر درُود پڑھنے کی عادت بنا لیں ۔اللہ تعالیٰ کا ہم پر کتنا بڑا انعام ہے کہ ہمیں درُود شریف کا تحفہ دیا گیا ہے اور اس کی برکت سے دنیا و آخرت دونوں میں ہمارے لیے خیر اور بھلائی رکھی گئی ہے اللہ پاک ہمیں اپنے فضل سے درُود شریف کے انوار و تجلیات سے فیض یاب ہونے والا بنا دے ۔ اللہ تبارک و تعالیٰ سے دعا ہے اللہ تبارک وتعالیٰ نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم پر درُود پاک پڑھنے کے صدقے ہم سب کو ہمارے والدین ،عزیز واقارب اور امت مسلمہ کے لیے بخش کا ذریعہ بنا دے ۔۔آمین! 





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved