تازہ ترین  

منفرد لب و لہجے کا شاعر , وسیم عباس
    |     4 months ago     |    تعارف / انٹرویو
وسیم عباس4جولائی 1978 کو جھنگ میں پیدا ہوئے ۔ ابتدائی تعلیم سیکرٹ ہارٹ سکول جھنگ سے حاصل کی ۔ میٹرک ،گورنمنٹ جناح ایفی شینسی ماڈل ہائی سکول سیالکوٹ کینٹ سے کیا اورفائن آرٹس میں ماسٹرزپنجاب یونیورسٹی لاہورسے کیااور آج کل ایک پرنٹنگ / ایڈورٹائزنگ ایجنسی میں بطور آرٹ ڈائریکٹر کام کر رہے ہیں۔بچپن سے ہی اُن کی لکھی بچوں کی کہانیاں اور نظمیں بچوں کے رسائل و اخبارات میں چھپتی رہی ہیں، کرکٹ ریکارڈز پر مبنی ان کی پانچ کتب یونیورسٹی دور میں ہی مارکیٹ میں آ چکی تھیں، ایک شعری مجموعہ بھی شائع ہو چکا ہے۔ لاہور کی بہت سی ادبی تنظیموں سے وابستہ ہیں۔
افلاک ادبی سوسائٹی کے جنرل سیکرٹری، لاہور رائیٹرز کلب کے جوائینٹ سیکرٹری اورلاہور پوئٹس سوسائٹی کےسیکرٹری نشر و اشاعت ہیں۔
جدید لب و لہجہ ، منفرد اسلوب اور جداگانہ فکر و خیال سے مزین اشعار کہنے والے بہت پیارے شاعر کا نمونۂ کلام دیکھئے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ملتا نہیں کسی بھی یزیدی سرشت سے
ایسے مرے مزاج پہ طاری حسینؑ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دیکھے بُری نظر سے کسی نے جو پھول ، پھل
چڑیا مرے شجر کی ابابیل ہوگئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جہانِ فن میں متاعِ سخن وری پائی
ترے خیال کو باندھا تو تازگی پائی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

روزی کی جستجو میں ہُوا ایسے دربدر
اِک عمر ہوگئی ہے میں گھر تک نہیں گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ خوف جو اِک عمر سے سینے میں چھپا تھا
اُس خوف کو ڈھونڈا اُسے آواز بنایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گُماں گزرتا ہے تم پر کہ ہیر جیسی ہو
کبھی کبھی تو یہ لاہور جھنگ لگتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

باپ کی جیب سے گری پرچی
گھر کی محرومیوں کی مظہر تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بکھری ہوئی تصویر مکمل نہیں ہوتی
جو سب سے ضروری ہے وہ ٹکڑا نہیں ملتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھے اب آئینہ کہتا ہے ہر پل
ترا چہرہ ترا چہرہ نہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں والدین کو جب سے کمائی دینے لگا
ضمیر بوجھ سے مجھ کو رہائی دینے لگا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی دیوار ہوتی ہے کھنڈر کی جس طرح ایسے
ترے لہجے کی تلخی سے دراڑیں پڑ گئیں مجھ میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں آئینہ ہوں انہی پتھروں میں جی لوں گا
بس ایک شرط ہے وہ عکس آتا جاتا رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چلتی ہوئی ٹرین کی زنجیر کھینچ دی
آنچل ترا کپاس میں آیا نظر مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ میرا کام ، یہ دفتر سنبھالتا ہے مجھے
وگرنہ دشت مسلسل پکارتا ہے مجھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ستم سرشت سے کیا ہو بھلائی کی اُمید
اِسی لئے مجھے دُنیا یزید لگنے لگی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرا ورثہ نوکری سادات کی
میں کہ بیٹا ہوں غلام عباس کا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

توُ نے دیکھا تو ہو گیا ہوں چراغ
ورنہ پتھر تو جل نہیں سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زندگی اتنی کٹھن ہے ، تلخ ہے کچھ اس قدر
کربلا سے شام تک کا فاصلہ ہو جس طرح
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سب ردیفوں قافیوں پر حکمرانی ہے تری
جس قدر ہے میری غزلوں میں روانی ہے تری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہا ہوں مدتوں اک آئینے میں
پھر اُس کے بعد میں چہرہ ہوا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فضائیں سرخ ہوتی جا رہی ہیں
مسافر کربلا تک آگیا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صورتِ زخم کبھی حرف بنا لینے دے
مجھ کو اشعار میں کچھ درد جگا لینے دے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں آج اِس لئے چھٹی کروں گا آفس سے
گزشتہ شب مری آنکھوں پہ کافی بھاری تھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آئینہ روز کیوں دکھاتا ہے
آرزو ، بےبسی ، شکستہ دلی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(پذیرائی).
Feedback
Dislike
 
Normal
 
Good
 
Excellent
 




فیس بک پیج

تصویری خبریں

ad

نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2017 apkibat. All Rights Reserved