تازہ ترین  

اخلاق
    |     4 months ago     |    افسانہ / کہانی
کوسٹر لاہور کی طرف رواں دواں تھی۔ مسافر خوش گپیوں میں مصروف تھے، کچھ کھانے پینے کی چیزوں سے انصاف کررہے تھے اور کچھ کھڑکی سے باہر دریاۓ جہلم کے خوبصورت منظر سے لطف اندوز ہو رہے تھے کہ اچانک انجن میں گڑگڑاہٹ ہوئی اور پہیے چرچراۓ اور کوسٹر رک گئ۔ کنڈکٹر نے مسافروں کو اترنے کا کہا اور خود آلات لے کر انجن کے در پے ہو گیا۔ مسافر اتر تو گئے لیکن آدھے گھنٹے کی محنت کے بعد بھی انجن سٹارٹ نہیں ہوا۔ مسافروں میں تین خواتین بھی شامل تھیں۔ انجن کے ٹھیک ہونے کے کوئی آثار نظر نہیں آرہے تھے چنانچہ ڈرائیور نے دوسری گاڑی میں سیٹییں دلوانے کا ارادہ کیا۔ ایک کوسٹر اشارہ کرنے پر رکی تو اس میں ایک سیٹ تھی جب کہ خواتین تو تین تھیں۔ حیرت تب ہوئی جب دو نوجوان جو دیکھنے میں میٹرک کے طالب علم لگ رہے تھے اپنی سیٹ سے اٹھے اور تینوں خواتین کی جگہ بنا ڈالی
اور بڑے احترام سے خواتین کو یہ کہتے ہوے بیٹھنے کو کہا کہ بزرگ خواتین کا ہمیں کھڑا ہونا اچھا نہیں لگ رہا ،کوئی مسئلہ نہیں ہم کھڑے ہو جائیں گے۔
آج کل کے نوجوانوں کے حالات کے پیش نظر جب ان میں کثیر تعداد بدتمیز اور بدلحاظ ہے، کوئی بھی ان سے اس احترام کی قطعاً توقع نہیں کرسکتا تھا لیکن ابھی کچھ لوگ باقی ہیں کے مصداق انہوں نے امید کا دیا روشن کر دیا کہ آج بھی نسل نو میں اخلاق زندہ ہیں بس ضرورت اس امر کی ہے کہ ان کی نوک پلک سنواری جائے جس کے لیے ان کی گھر میں تربیت کی جائے اور میڈیا کا استعمال محدود کر دیا جاے۔

ع ذرا نم ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی
Feedback
Dislike
 
Normal
 
Good
 
Excellent
 




فیس بک پیج

تصویری خبریں

ad

نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2017 apkibat. All Rights Reserved