تازہ ترین  

علمی و ادبی حلقوں کی معتبر ادبی شخصیت یعقوب پرواز
    |     9 months ago     |    تعارف / انٹرویو
علمی و ادبی حلقوں کی معتبر ادبی شخصیت یعقوب پرواز 
12اپریل 1946ء کو جاماں رائے تحصیل ترن تارن ضلع امرتسر (انڈیا) میں پیدا ہوئے.آپ کے والدِ گرامی محمد اسماعیل پنجابی کے شاعر تھے اور قرآنی واقعات کو منظوم کرنے میں مہارت رکھتے تھے. ان کی زیڈ کے نب سے لکھی ہوئی قلمی بیاض یعقوب پرواز کے پاس موجود ہے.
پرواز صاحب ابتداء میں اپنے والدِ کو اپنے حلقۂ احباب میں حفیظ جالندھری کی شہرۂ آفاق تصنیف"شاہنامہ اسلام" ترنم سے سناتے ہوئے سماعت کیا کرتے تھے. بس یہی محرکات پرواز صاحب کو کوچہء شعر و سخن میں لے آئے۔ علاوہ ازیں ان کے والد گرامی گاہے گاہے دیال سنگھ فیروز پوری کی شعری تصنیف "زندگی بلاس" بھی پڑھا کرتے تھے جس میں شاعر نے انسان کی پیدائش سے لیکر سو سال تک کی عمر کا احوال بیان کیا ہے.
پرواز صاحب چھٹی ساتویں جماعت کے زمانے میں سکول میں بیت بازی میں حصہ لیا کرتے تھے, حافظہ اتنا قوی تھا کہ ایک دفعہ نظم پڑھنے کے بعد زبانی یاد ہو جایا کرتی تھی. رفتہ رفتہ شاعری کا ذوق پروان چڑھتا رہا یہاں تک کہ 1962ء میں میٹرک کے بعد ٹوٹے پھوٹے شعر کہنے لگے.
1965ء کی پاک بھارت جنگ میں ان کی شاعری پر پُرزے نکال چکی تھی لیکن اس زمانے میں انہیں محسوس ہوا کہ اوزان اور زبان و بیان میں اصلاح کیلئے کسی رہنما کی ضرورت یے.
پرواز صاحب کے دوست ملک محمد امین پریس رپورٹر نے ان کی مشکل کو یوں آسان کیا کہ اپنے دوست ظفر اقبال جوکہ اقبال عامر کے قلمی نام سے لکھتے تھے,کو پرواز صاحب کا پاتھ پکڑا دیا. چنانچہ وہ 1966ء میں اقبال عامر کے حلقۂ تلمذ میں شامل ہوئےاور 1990ء تک ان سے اصلاح لیتے رہے حالانکہ استاد نے انہیں بہت پہلے فارغ الاصلاح قرار دے دیا تھا.
1992ء میں پرواز صاحب کے استاد گرامی راہی ملک عدم ہوئے. اقبال عامر پتوکی میں "بزمِ ارتقائے سخن" کے بانی تھے.بزم کے تحت عموما" طرحی مشاعرے منعقد کئے جاتے تھے جس میں ملک بھر سے نامور شعراء شرکت کیا کرتے تھے. ہرواز صاحب بھی ان مشاعروں میں حصہ لیا کرتے تھے. ان مشاعروں میں نوشہرہ سے استاد شاعر نظیر الحسن نظیر المعروف نظیر کتھولوی، لاہور سے اقبال ساجد, نظر رضوی، زیب ملیح آبادی، شرف شیخو پوری، رائے ونڈ سے اسیر عابد, اشرف جاوید, پرویز فرہاد,رفیق آزر, اور فقیر کامل شرکت کیا کرتے تھے.انہی دنوں اسیر عابد مرحوم نے دیوانِ غالب کے پنجابی ترجمے کا آغاز کردیا تھا اور وہ بزمِ ارتقائے سخن کے مشاعروں میں غالب کی غزل کا تازہ پنجابی ترجمہ سنایا کرتے تھے.

میڑک کے بعد یعقوب پرواز کیمبل پور (اٹک) میں محکمہ جنگلات میں بھرتی ہوئے۔ بعد ازاں چھانگا مانگا آگئے.

1979ء میں پرواز صاحب نے محکمہ تحفظ جنگلی حیات لاہور جوائن کیا جہاں سے 1993ء میں ریٹائرڈ ہو گئے.

ریٹائرمنٹ کے بعد شوگر انڈسٹری میں فرائض سرانجام دیتے رہے۔

قیامِ لاہور کے دوران مختلف ادبی تنظیموں سے وابستہ رہے جن میں حلقۂ اربابِ ذوق(امجد الطاف گروپ), پنجابی ادبی پروار، گلشنِ ادب, گوشۂ ادب وغیرہ شامل ہیں. علاوہ ازیں روزنامہ"وفاق" میں ہفتہ وار ادبی کالم "نیرنگِ لاہور" لکھتے رہے, اسی دوران مختلف ادبی رسالوں میں آپ کا کلام چھپتا رہا۔

ملازمت کے دوران پرائیویٹ طور پر ایف-اے کیا اور لاہور بورڈ میں اوّل پوزیشن حاصل کی جس پر انہیں گولڈ میڈل سے نوازا گیا.

یعقوب پرواز کو قیام لاہور کے دوران اپنے دادا استاد نظیر کتھولوی کی خدمت میں اپنے استاد کی معیت میں حاضری کا شرف بھی حاصل رہا.

قیام ِلاہور کے دوران جن سر بر آوردہ شعراء سے شرفِ نیاز حاصل رہا, ان میں جناب علیم ناصری, خالد علیم، عارف عبدالمتین, انجم رومانی, امجد الطاف, تحسین فراقی, حفیظ الرحمن احسن, جعفر بلوچ, راجہ رشید محمود، حسرت حسین حسرت, حفیظ تائب, تبسم رضوانی, حامد یزدانی، یزدانی جالندھری، راجہ رسالو, آصف خان، بشیر منذر اور قدیر شیدائی شامل ہیں.

آپ کی شعری کتب میں غزلوں کا مجموعہ"شام سے پہلے" 1990ء اور دوسرا ایڈیشن 1994ء میں شائع ہوا. پنچابی غزلوں کا مجموعہ "تارے گن دیاں اکھاں" 2004ء میںَ چھپا.
غیر مطبوعہ کتب میں نعتیہ مجموعہ "مدینہ میری منزل ہے" زیر ترتیب ہے۔ علاوہ ازیں اردو اور پنجابی مجموعوں پر ابتدائی کام مکمل ہو چکا ہے. اخباری ادبی کالموں کا مجموعہ بھی اشاعتی منصوبے میں شامل ہے.

اللہ کریم استادِ محترم یعقوب پرواز کو ایمان وصحت والی زندگی سے نوازے اور ہمارے سروں پر ان کا سایہ تا دیر سلامت رکھے آمین.





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved