تازہ ترین  

ہر آدمی میں رہتے ہیں دس بیس آدمی
    |     5 months ago     |    شاعری


رپورٹ

از۔ ڈاکٹر ارشاد خان بھارت

ادارہ عالمی بیسٹ اردو پوئیٹری ہمیشہ سے ہی منفرد پروگرام پیش کرتا آیا ہے ۔ جس میں واہ واہی کم اور انفرادیت بدرجہ اتم موجود رہی ہے ۔
پروگرام 147 واہ واہ پسند ۔۔۔ارباب خردمند نے ترتیب دیا جنھیں انانیت کا سیلاب بہا لے گیا ۔ ادب میں ادب ملحوظ رکھنا چاہیے ۔شائستگی کی روح مجروح نہیں ہونی چاہیے ۔ جنھوں نے اپنے زعم میں اپنی بستی الگ بسائی اور جنگل میں مور ناچا کس نے دیکھا کے مصداق اپنی انا میں محو رقص اندھیروں میں مدغم ہوگئے ۔
رواں دواں کشتی میں چھید کرنے والوں کے ہاتھ سے پتوار چھین باد مخالف کے اٹھتے بھنور سے توصیف ترنل صاحب نے کھینچ کر کشتی کو ساحل پر لے آئے ۔ دھن کے پکے بات کے سچے ادبی فنکار نے نظامت کے جھنڈے گاڑ کر یہ ثابت کردیا کہ ۔

ہر آدمی میں رہتے ہیں دس بیس آدمی

اس کامیاب پروگرام میں پابند ومعری نظمیں نیز گیت پیش کئے گئے ۔صدارت گل نسرین صاحبہ نے کی ، مہمان خصوصی محترم علی اکبر صاحب ومحترم ثمر زریاب صاحب تھے ۔مہمان اعزازی محترمہ نیر رانی شفق صاحبہ ، محترم علیم طاہر صاحب اور محترم مقیم مینا نگری صاحب تھے ۔
شعراء کرام نے اپنی بہترین تخلیقات پیش کیں جسے بےحد سراہا گیا ۔
پیش کردہ کلام کی کچھ جھلکیاں ملاحظہ ہو ۔

گیت
آنکھ میں آنسو
دل میں آہیں ، لب پر برہا کا گیت
کیسی تیری پرہت،سجنوا، کیسی تیری پریت
صبیحہ صدف بھوپال
۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔
نظم
یہ طے ہوا تھا
تمہارے میرے جو درمیاں ہیں
وہ فاصلے اب ٹھہر گئے ہیں

صبیحہ صدف بھوپال
۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔
مجھے تم یاد آتی ہو

بڑھاپے کی گلیوں میں
تنہا بھٹکنے لگی
تب سے
آج تک
یاد آتی ہو تم
مجھے یاد آتی ہو تم

گیت ۔۔
دھیرے دھیرے سلگ رہے ہیں سینے میں جذبات
میں کیسے کاٹوں رات
ڈاکٹر سراج گلاؤٹھوی
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔
لوری گیت

سوجاری سجنی سوجا
نیندوں میں پیاری کھوجا

علیم طاہر انڈیا
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
نظم ۔ ڈھونڈ پھر نئی دنیا

ہو جہاں امن و سکوں
اس ڈگر کو کھوج کر
جسم کو کر تازہ دم
ڈھونڈ پھر دنیا نئی

اصغر شمیم کولکتہ
۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔
گیت
بھول نہ جانا ، بھول نہ جانا
پیار کو میرے بھول نام جانا

شکیل انجم مینا نگری
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔

شام سہانی آئی ہے
ہرسو خوشبو لائی ہے
چھائے رنگ بہار کے ہیں
میلے دیکھو پیار کے ہیں

نیر رانی شفق
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلاخیں سیخ پا کیوں ہیں

یعنی شکستہ روشنی کی ہم سفر کرنیں
میرے پہلو میں آنا چاہتی ہیں

ڈاکٹر نبیل احمد نبیل
۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔
کہاں ہے ؟
اے مانجھی مان ارشد کا سجھاؤ
سنبھال اب سیکولر پتوار
کہاں ہیں امن کے ٹھیکیدار

ارشد مینا نگری
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔
نظم ۔ دل آج بھی مقروض ہے

کاغذ میں لپٹے خیالوں کا
پل میں گزرے سالوں کا
سوز عشق کے احوالوں کا
دل میں پھوٹے چھالوں کا
دل آج بھی مقروض ہے

گیت۔
گیسو تیرے چھولے تو پرویا بادل ہو جاوت
تجھ سے نین ملائے تو موسم بھی پاگل ہو جاوت
علی اکبر کرنالی
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔

نظم دل آج بھی مقروض ہے
کے خالق ،، وقار الاسلام ،،
ٹیچرس کے نام

بے لوث وبے باک ہو خدمات جو ان کی
طے ہے کہ وہ جنت کے ہی حقدار ہیں ٹیچرس
ساحل تماپوری
۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
کنکریٹ کے جنگل میں

گاؤں کے یہ پاکیزہ منظر
کنکریٹ کے اس جنگل میں
خوابوں کی باتیں لگتی ہیں

گیت ۔۔
اس نے دنیا کو چھپا کے مجھے خط لکھا ہے

امین جس پوری
۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔۔
اداسی

اداس ایک جنگل ہے
اداسی ایک صحرا ہے

ڈاکٹر شاہد رحمان فیصل آباد
۔۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
محبت کا نگر
سنا ہے کہ
۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔
محبت کا نگر واللہ سب سے بڑھ کر پیارا ہے

غزالہ انجم
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔
نظم بصورت غزل
بعنوان ۔۔میرا چاند

اس کے آگے ہیچ ہے ماہِ تمام
روح پرور خوشنما ہے میرا چاند
جناب برقی اعظمی
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
گیت۔

جب شام ڈھلے پنچھی گھر لوٹ آتے ہیں
ابن ربانی
۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
خوشبو کی آبشاریں
میں اپنی سوچوں کی سرزمیں پر
کوئی تو گلشن اگا کے جاؤں
ملک سکندر
۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔
آخری سفر
میں اس مقام کی جانب رواں دواں ہوں جہاں
جو ایک بار گیا لوٹ کر نہیں آیا

جمیل ارشد کھام گانوی
۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔
آزاد نظم
ہم اب بھی تمہارے ہیں
اب کون کہے تم سے

سیما گوہر
۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
غمو ں کے بہتے دریا میں
ابھی سب کچھ نہیں ڈوبا
ابھی امید کا لوگو
بہت سا ما ن باقی ہے
ابھی امکا ن باقی ہے

عمر تنہا
فتح پور لیّہ پنجاب پاکستان
۔۔۔۔۔ ۔۔
کہانی ختم کرنے سے
کہاں یہ ختم ہوتی ہے
نیا اک موڑ لیتی ہے
ہمیشہ ساتھ چلتی ہے
کبھی تم کو کبھی عامرؔ کو
لے کے بات چلتی ہے

عامرؔحسنی
ملیشیا
۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
اس خوبصورت پروگرام کے اختتام پر محترمہ گل نسرین صاحبہ نے خوبصورت گیت پیش کیا ۔

میں تو سمجھی ، میں ہی تھی شہزادی پیا

صدر مشاعرہ کے بہترین خطبے کے بعد یا محفل سخن رات سوا گیارہ بجے اختتام پذير ہوئی ۔






Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved