تازہ ترین  

منفرد اسلوب کے شاعر یعقوب پرواز صاحب
    |     3 months ago     |    تعارف / انٹرویو

یعقوب پرواز


محمد یعقوب 12 اپریل 1946 کو جاماں رائے
تحصیل ترن تارن ضلع امرتسر (انڈیا) میں پیدا ہوئے۔

1947 میں ان کا خاندان ہجرت کر کے پاکستان آ گیا اور اب وہ چھانگا مانگا میں سکونت پذیر ہیں

انہوں نے میٹرک 1962ء میں ایم بی ہائی سکول پتوکی سے کیا ۔
بی ۔ اے ۔ پنجاب یونیورسٹی سے کیا۔

وہ محکمہ تحفظ جنگلی حیات پنجاب لاہور سے منسلک رہے اور آج کل ریٹائرمنٹ کی زندگی گزار رہے ہیں ۔

شاعری کا آغاز 1965 میں کیا۔ اردو اور پنجابی میں اشعار کہتے ہیں ۔ 

ان کا شمار استاد شعراء کرام میں ہوتا ہے ۔۔۔۔ چھانگا مانگا کے گرد و نواح میں خصوصی طور پر ان کو بڑا مقام حاصل ہے ۔۔ نو آموز اور صاحبِ کتاب شعرا بھی ان سے رہنمائی حاصل کرتے ہیں ۔۔۔۔

ان کے اب تک دو شعری مجموعے منظرِ عام پر آ چکے ہیں۔

شام سے پہلے (اردو غزلیں) 1990ء

تارے گن دیاں اکھاں (پنجابی غزلیں) 2004ء

ان کی پنجابی کتاب ،، تارے گن دیاں اکھاں ،، پر انہیں 2006 میں بلھے شاہ ایوارڈ سے بھی نوازا جا چکا ہے۔

منفرد اسلوب اور جداگانہ لب و لہجے میں اشعار کہتے ہیں آئیے ان کا نمونۂ کلام دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب سے پہلے ان کی لکھی ہوئی مشہورِ زمانہ نعت کا ذکر ہو جائے

جس طرح ملتے ہیں لب نامِ محمد کے سبب
کاش ہم مل جائیں سب نامِ محمد کے سبب
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کے جداگانہ اسلوب پڑھنے والوں کو ورطہِ حیرت میں ڈال دیتے ہیں

قدم قدم پر تضاد ابھرے ہیں زندگی کے
کہ ہم نے کالے حروف لکھے ہیں روشنی کے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور خوبصورت احساسات کے نمائندہ اشعار دل موہ لیتے ہیں

پھول مہکیں یا دلوں کے زخم لٙو دینے لگیں
سبز موسم کا کوئی تو ترجماں زندہ رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان کا یہ شعر دیکھیے

ہوئےصیاد کے وارے نیارے
پرندہ شاخ پر سویا ہوا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خوبصورت انداز میں کہے گئے اشعار

اس میں کچھ دانائیوں کا ہاتھ تھا
میری نادانی سے گھر ٹوٹا نہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کسی سے کچھ گماں رکھنا، کسی سے بدگماں رہنا
ہمیں اب تک نہیں آیا سلیقے سے یہاں رہنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رہینِ آب و دانہ ہی سہی آوارگی اپنی
گھروں کو لٙوٹ آتے ہیں پرندے شام سے پہلے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور اس شعر میں تو کمالِ فن ابھر کر سامنے آیا

کہاں ٹھہری ہے خواہش کوئی دل میں
مرے دل سے نکل جائے گا تُو بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہنگامہ ہائے زیست کا اعجاز دیکھیے
اک لمحہء فراغ بھی حاصل نہیں رہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انسانی جذبات و احساسات پر سادہ الفاظ میں تبصرہ ۔۔۔

ماضی کا انسان سنا ہے
غیرت سے بھی مر جاتا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پرندہ آنکھ والا تھا یقیناً
شکاری ہاتھ مٙلتا جا رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود سوچ لو کہ مسئلہ کیسا ہے سامنے
پیچھے عدو کی فوج ہے دریا ہے سامنے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہت خاموش ہے بھوکا سمندر
مگر دریا نگلتا جا رہا یے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لایا گیا تھا دار تک بارانِ سنگ میں
اس شہر کی جو شخص تھا سوغات آخری
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور عمیق گہرائی لیے یہ شعر

یقیں ہے یہ جسارت خودکشی سے پھر بچا لے گی
میں گھر کا بیچ آیا یوں سروسامان ردی میں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معاشرتی مسائل کو اجاگر کرتے ہوئے یہ شعر

مرے بچے بھی ہیں مجھ سے گریزاں
کھلونا ہوں مگر ٹوٹا ہوا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائے

خوں سے بھرے کہ آب سے مشکیزہء طلب
دریا بھی ہے قریب اور مقتل بھی پاس ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آئینہ بے بال تھا اور آئینے کے سامنے
سر جھکائے تھی کھڑی بے چہرگی سوچوں میں گم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حاسدین کے لیے

نکل آیا ہوں جانے کتنا آگے
بہت پیچھے مرے شورِ سگاں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کس احسن انداز میں غم کا اظہار کرتے ہیں

یہاں غم کی فراوانی بہت ہے
غزل کہنے میں آسانی بہت ہے

آنسو تھے پرواز کسی کے
دریاؤں کا اپنا کیا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائے یہ سادگی

گمنامیوں کے خول میں رہنا پسند ہے
کیسے لگاؤں نام کی تختی مکان پر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زندگی کی رفتار کو کس خوبصورت انداز میں پیش کیا

بھاگ ریے تھے سارے منظر پیچھے کو
جب پرواز نے دیکھا چلتی گاڑی سے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دکھائے گی کبھی تو چاند پورا
یہ کھڑکی ادھ کُھلی کب تک رہے گی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔
دعا ہے کہ ربِ کریم استادِ محترم کو صحت و تندرستی، دو جہان کی خوشیوں اور نعمتوں سے مالا مال رکھے اور وہ ہم جیسے نکموں میں علم کی روشنی بانٹتے رہیں آمین
عابد اقبال عمر
کوٹ رادھا کشن






Comments


گریٹ شخصیت ، لاجواب شاعر ۔۔۔۔۔سلامتی ہو
آمین


فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved