تازہ ترین  

غزل نے اوڑھ لی ہے سوگوار تنہائی
کہاں تلک کوئی جھیلے گا یار تنہائی
    |     2 months ago     |    شاعری
غزل نے اوڑھ لی ہے سوگوار تنہائی
کہاں تلک کوئی جھیلے گا یار تنہائی 

نہ وہ تڑپ ہے نہ پہلے سی دل کی حالت ہے
نہ جانے رہتی ہے کیوں بیقرار تنہائی 

کبھی جو چمکے ہیں آنکھوں میں یاد کے جگنو
بنی ہے دل کی مرے غمگسار تنہائی

وہ عکس ٹوٹ چکا چہرہ ہوگیا معدوم
کسے پکارتی ہے بے کنار تنہائی 

اداس ہجر کی راتیں ہیں اور برساتیں
ہے ہمسفر یہ مری اشکبار تنہائی 

تھا انتظار ہمیں جس کا اک زمانے سے
اسی خوشی سے ہوئی تار تار تنہائی

 بھٹک رہی ہے غزل دشت نارسائی میں
وہ دے صدا تو ہٹے یہ غبار تنہائی





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved