تازہ ترین  

"تارے زمیں پر" ایک جائزہ ۔۔۔!
    |     2 weeks ago     |    گوشہ ادب
آج کے ترقی یافتہ دور میں جدید ٹیکنالوجی ، تیز ترین ذرائع ابلاغ اور سوشل میڈیا نے ہماری زندگی پر خصوصا نوجوانوں پر گہرے اثرات مرتب کیے ہیں۔ دور حاضر کا نوجوان انٹرنیٹ کی دنیا میں گم ہو کر رہ گیا ہے۔ اس بات سے ہرگز انکار ممکن نہیں کہ انٹرنیٹ نے ہمارے بہت سے کام آسان کردیے ہیں اور گھنٹوں میں ہونے والے کام اب پل بھر میں ہوجاتے ہیں مگر انٹرنیٹ نامی اس بلا کے سبب بہت سے نقصانات بھی اٹھانا پڑے ہیں۔ آج کا نوجوان سوشل میڈیا کے ذریعے دور بیٹھے دوستوں کے تو بالکل قریب ہے مگر اپنے عزیز ، رشتہ دار اور گھر والوں سے دور ہوچکا ہے۔ آج کا نوجوان سوشل میڈیا ویب سائٹس کے گھن چکر میں گم ہوکر اپنا زیادہ تر وقت لائک ، کمنٹس ، واہ واہ اور داد و تحسین سمیٹنے میں گزار دیتا ہے جبکہ اپنی زندگی کا مقصد بھول چکا ہے۔ وہ نوجوان جس پر حصول علم کی خاطر دور دراز کا سفر بھی گراں نہ گزرتا تھا، آج کتب بینی جیسے عظیم مشغلے کو خیر باد کہہ چکا ہے۔ ذرائع ابلاغ اور انٹرنیٹ کی دنیا میں کھویا ہوا آج کا نوجوان میڈیا پر نظر آنے والے ڈرامائی کرداروں کو اپنا آئیڈیل مان کر ان جیسا بننے کی تگ و دو میں ہمہ تن مصروف ہے جبکہ اپنے اصل ہیروز کو مکمل طور پر بھول چکا ہے۔

جن والدین کے جگر گوشے ابوبکر ؓ کی صداقت ، عمر ؓ کی عدالت ، عثمان ؓ کی سخاوت اور علی ؓ کی شجاعت کو بھول کر فلمی و ڈرامائی کرداروں میں سے اپنا آئیڈیل تلاش کرتے ہیں ایسے والدین کو فکر مند ہونا ہوگا اور بروقت مثبت کردار ادا کرتے ہوئے اپنے بچوں کو راہ راست پر لانا ہوگا ورنہ بروز محشر بچوں کے متعلق پوچھے جانے والے سوالات کا کوئی جواب نہیں دیا جاسکے گا۔ بچوں اور نوجوانوں کی بہترین تربیت کرتے ہوئے انہیں صحابہ کرام ؓ اور اسلاف کی تعلیمات سے روشناس کروانا ہوگا تاکہ وہ ڈرامائی اور اصلی ہیروز کا فرق کرتے ہوئے اپنے اصلی ہیرو کو ہی آئیڈیل منتخب کریں۔ انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا میں گم نوجوانوں کو سوشل میڈیا سے نجات دلاکر کتب بینی کی طرف واپس لایا جائے اور ایسا لٹریچر مہیا کیا جائے جسے پڑھ کر ان کی توجہ دین اسلام کی طرف مبذول کروائی جاسکے اور وہ اسوہ حسنہ ؐ و حیات صحابہ کرام ؓ سے ایمان افروز واقعات پڑھ کر ان سے سبق سیکھیں اور ان پر عمل پیرا ہونے کی کوشش کریں۔

بچوں اور نوجوانوں کی تربیت و رہنمائی کی ضرورت ہر دور میں درپیش رہی ہے اور اس سلسلے میں اہل علم و دانش اپنی تمام تر صلاحیتیں بروئے کار لاتے ہوئے ملت کے نونہالان کی تربیت کے لیے عملی اقدامات کرتے رہے ہیں۔ دورحاضر میں کسووال تحصیل چیچہ وطنی کے عظیم سپوت ناصر محمود بیگ نے تربیت بچگان و نوجوانان کا بیڑہ اٹھاتے ہوئے "تارے زمیں پر" کے نام سے ایک عظیم شہہ پارہ ترتیب دیا ہے۔ ناصر محمود بیگ بنیادی طور پر شعبہ سائنس میں بطور استاد نونہالان ملت کی آبیاری میں ہمہ تن مصروف ہیں مگر اس کے ساتھ ساتھ نسل نو کی تعلیم و تربیت کی فکر اور تڑپ انہیں بے چین کیے ہوئے ہے اور اسی فکر اور تڑپ کے ہاتھوں مجبور ہوکر انہوں نے "تارے زمیں پر " جیسا شاہکار ترتیب دیا ہے۔ ناصر محمود بیگ کا تالیف کردہ یہ شہہ پارہ ان کی مختصر کہانیوں پر مشتمل ہے جو مختلف جرائد میں اشاعت کے مراحل طے کرچکی ہیں اور انہیں یکجا کرکے کتابی شکل دی گئی ہے۔ ناصر محمود بیگ کی کہانیاں زیادہ تر حضور اکرم ؐ اور صحابہ کرام ؓ کی زندگی کے گرد گھومتی ہیں جنہیں سادہ اور آسان الفاظ میں بیان کیا گیا ہے تاکہ ہر عمر کے بچوں اور جوانوں کو سمجھنے میں آسانی رہے۔ ناصر محمود بیگ نے اپنی کہانیوں میں فرضی کرداروں اور من گھڑت واقعات کی بجائے صحابہ کرام ؓ کی زندگی سے سبق آموز واقعات کو شامل کیا ہے۔ معروف رائٹر اختر سردار چوہدری کی وساطت سے موصول ہونے والی اس کتاب "تارے زمیں پر" پڑھنا شروع کی تو کوئی کہانی ایسی نہ تھی جسے شروع کرکے مکمل نہ پڑھا گیا ہو۔ کہانی شروع ہوتے ہی دلچسپی اس قدر بڑھ جاتی ہے کہ مکمل پڑھے بنا رہا نہیں جاتا ۔ ناصر محمود بیگ کی یہ کتاب جہاں ایک طرف نوجوانان و نونہالان ملت کی تربیت و رہنمائی میں ممد و معاون دکھائی دیتی ہے وہاں دوسری طرف ہر کہانی ایمان افروز ہے جسے پڑھنے کے بعد دین اسلام، صحابہ کرام ؓ ، محدثین، آئمہ کرام اور اسلاف سے محبت مزید بڑھ جاتی ہے۔

ناصر محمود بیگ کا قلم انتہائی پختہ اور قارئین کے جذبات سے کھیلنے کے ہر ہنر سے آشنا ہے۔ ایک وقت تھا جب بزرگ بچوں کو صحابہ کرام ؓ کی زندگی کے واقعات سنایا کرتے تھے مگر آج کے ترقی یافتہ دور میں وہ سب کچھ کہیں گم ہوکر رہ گیا ہے۔ ایسے میں ناصر محمود بیگ کی کتاب "تارے زمیں پر" ایک بہترین کاوش ہے جو دور حاضر کے بگڑے ہوئے نوجوانوں کو راہ راست پر لانے میں ضرور معاون ثابت ہوگی۔ انتہائی کم قیمت میں بہترین کاغذ اور خوبصورت سر ورق پر مبنی اس کتاب میں چالیس کے قریب فرضی اور جھوٹے کرداروں سے پاک، دلوں کو موم کردینے والی سبق آموز کہانیاں شامل ہیں جو ناصر محمود بیگ کی انتھک محنت و لگن کے نتیجے میں کتابی شکل میں دستیاب ہوئی ہیں۔ مہنگائی کے اس دور میں ایسا بیش قیمت تحفہ ہزاروں روپے خرچ کر کے بھی مل جائے تو سودا مہنگا نہیں ہوتا مگر ناصر محمود بیگ کے اس عظیم شہہ پارے کی قیمت صرف 200 روپے رکھی گئی ہے جسے ہر کوئی آسانی سے خرید سکتا ہے۔ "تارے زمیں پر" ایکسپو سنٹر لاہور میں 1 تا 5 نومبر کتاب میلے میں دستیاب ہونے کے ساتھ ساتھ 03143093503 پر رابطہ کرکے براہ راست بھی منگوائی جاسکتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تحریر : ملک محمد شہباز






Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved