تازہ ترین  

تحریک لبیک کے ساتھ معاہدے کو سرینڈر کہنے پر ہنگامہ
    |     1 week ago     |    اداریہ
قومی اسمبلی میں آسیہ بی بی کو بری کرنے کے عدالتی فیصلے پر احتجاج کرنے والے مظاہرین سے حکومتی معاہدے کو پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما کی جانب سے ’سرینڈر‘ کہنے پر حکمراں جماعت پاکستان تحریک انصاف اور پاکستان پیپلز پارٹی کے اراکین کے درمیان شدید ہنگامہ آرائی ہوئی اسپیکر اسد قیصر کی صدارت میں قومی اسمبلی کے اجلاس میں پیپلز پارٹی کی رکن قومی اسمبلی شازیہ مری کی جانب سے حکومت اور مظاہرین کے درمیان ہونے والے معاہدے کو ’سرینڈر دستاویزات‘ کا نام دیا گیا جبکہ ایسے الفاظ بالکل نہیں بولنے چاہئے تهے کیونکہ دونوں فریقین نے سوچ سمجه کر مزاکرات کے بعد معاہدہ کیا تها شازیہ مری نے وزیر اعظم عمران خان کے نام میں 'نیازی' کے لفظ کا استعمال کرتے ہوئے 1971 میں جنرل اے اے کے نیازی کی جانب سے دستخط کیے گئے سرینڈر دستاویزات سے بھی تشبیہ دی جس کے بعد بنگلہ دیش بنا تھا وزیر برائے پارلیمانی امور علی محمد خان نے شازیہ مری کی جانب سے کسی کے انفرادی عمل پر پوری قوم کو ان سے ملانے پر اعتراض اٹھایا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ حقیقت ہے کہ جنرل نیازی نے 1971 میں بھارتی فوج کے آگے ہتھیار ڈالے تھے، تاہم یہاں دیگر نیازی بھی ہیں جو قوم کے لیے قربانیاں دے رہے ہیں۔ اسپیکر نے اراکین اسمبلی کو خبردار کیا کہ آئندہ کوئی بھی رکن کسی قوم کی تضحیک نہیں کرے گا۔ تاہم شازیہ مری نے دوبارہ کہا کہ وہ جنرل نیازی کا نام استعمال کرتی رہیں گی جس پر حکومتی اراکین اپنی نشستوں پر کھڑے ہوگئے اور شور شرابہ شروع کردیا اور مچھلی منڈی کا سما پیدا ہوگیا پیپلز پارٹی کے کراچی سے رکن قومی اسمبلی سید رفیع اللہ اور تحریک انصاف کے لیہ سے رکن اسمبلی عبدالمجید خان کے درمیان بحث ہنگامے کی صورت اختیار کرگئی۔ سید رفیع اللہ، عبدالمجید خان کے ریمارکس پر سیخ پا ہوگئے اور اپنی سیٹ سے وہ عبدالمجید خان کی جانب بڑھنے لگے ایسا لگ رہا تها کہ یہ اسمبلی نہیں پہلوانی اکھاڑا ہے لیکن بیچ بچاو ہوگیا اسپیکر اسمبلی نے دونوں ممبران کو ایوان سے باہر نکالنے کا حکم دیا تاہم صورتحال قابو میں نہ آنے پر انہوں نے اجلاس کو کل صبح تک کے لیے ملتوی کردیا گر ایسی صورتحال ہی رہی تو ہم اپنے نمائندو سے کیا امید کر سکتے ہیں





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved