تازہ ترین  

آسیہ مسیح کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کا معاملہ
    |     7 days ago     |    اداریہ
وزیر مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا ہے کہ آسیہ بی بی کا نام ان پر جرم ثابت ہونے تک ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) میں نہیں ڈالا جاسکتا، شہریار آفریدی نے مزید کہا کہ 'جب تک آسیہ بی بی کو کسی الزام میں مجرم قرار نہ دیا جائے یا اس معاملے میں کوئی عدالتی حکم نہ ہو، اس وقت تک ان کا نام ای سی ایل میں کسی صورت نہیں ڈال سکتے- وزیر داخلہ کا کہنا تها کہ سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی کی اپیل ہر کسی کا قانونی اور شرعی حق ہے اور اپیل پر عدالت عظمیٰ جو حکم دے گی اس پر مکمل عمل درآمد ہوگا ،جب تک کوئی مجرم قرار نہ دیا جائے اور کوئی قانونی جواز نہ ہو، اس وقت تک ای سی ایل میں کیسے نام شامل کیا جاسکتا ہے -

وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ 'آسیہ بی بی اور ان کا خاندان تاحال پاکستان میں ہیں اور انہیں حکومت کی جانب سے مکمل سیکیورٹی فراہم کی گئ ہے اور آسیہ بی بی کے بیرون ملک جانے کے حوالے سے جو افواہیں پھیلائی جا رہی ہیں وہ بالکل غلط ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ’ہر پاکستانی خواہ اس کا تعلق کسی بھی مسلک یا مذہب سے ہو وہ ریاست کی ذمہ داری ہے اور پاکستان میں کسی کو جان و مال سے کھیلنے یا اپنی شرائط مسلط کروانے کے لیے لائسنس نہیں دے سکتے -

واضح رہے کہ آسیہ بی بی کی بریت کے فیصلے کے بعد مذہبی جماعت تحریک لیبک پاکستان (ٹی ایل پی) کا ملک بھر ہونے والا احتجاج ختم کروانے کے لیے حکومت نے ان کے ساتھ 5 نکاتی معاہدہ ہوچکا ہے اور معاہدے کے تحت آسیہ بی بی کا نام فوری طور پر 'ای سی ایل' میں شامل کرنے کے لیے قانونی کارروائی شروع کرنے پر اتفاق تھا۔

وفاقی وزیر مذہبی امور نورالحق قادری کا بیان سامنے آیا تها کہ آسیہ بی بی کا نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا فیصلہ عدالت ہی کر سکتی ہے انہوں نے پشاور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا تها کہ 'آسیہ بی بی کا نام ای سی ایل میں ڈالنے کے حوالے سے ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں ہوا ہے، لیکن ان کا نام ای سی ایل میں قانونی طریقے سے ڈالا جائے گا جس کا فیصلہ عدالت کرے گی۔





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved