تازہ ترین  

آج وہ ہماری باتوں پر ہوں ہاں کیے جا رہے ہیں
    |     2 weeks ago     |    شعر و شاعری
کل جو ہماری باتوں پر کھل اٹھتے تھے
آج وہ ہماری باتوں پر ہوں ہاں کیے جا رہے ہیں

آ گئی ہے اُن کے لہجے میں سرد مہری
زبان حال سے تو بھلے وہ اقرار کیے جا رہے ہیں

جن کے در پر آ کر سکون کی چادر ہوتی تھی میسر
آج اُن کے در پر کھڑے بے آسرا ہوئے جا رہے ہیں

کیسی کے ابا کے فرمان کا ہو گیا ہے اثر اُن پر
انہیں بھی اب سارے مرد مطلبی لگے جا رہے ہیں

بُلبل کو جو تھی شاخ میسر سستانے کو
اپنے پاوں خود کلہاڑی مار کر ڈھائی جا رہے ہیں

ہم انہیں اپنا کہتے اور مانتے ہیں دل سے
یہ بات ڈنکے کی چوٹ پر کہے جا رہے ہیں

یو بے رُخی نا اپنائیں وہ ہم سے طیب
بوریا بستر ہم اپنا گول کیے جا رہے ہیں





Comments


There is no Comments to display at the moment.



فیس بک پیج


مقبول ترین

اسلامی و سبق آموز


نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

     
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved