اشتہارات
کورل ڈرا 2018
عرق ریزیاں ۔۔۔ تحریر : عرق حیات
 
یہ ایک تلخ حقیقت ہے کہ آج کا دور مکمل طور پر مادیت پرستی میں جکڑا ہوا ہے۔ مادیت پرستی سے مراد مادی اشیاء سے لگاؤ، ظاہری عیش و عشرت کا دلدادہ ہونا۔ جب انسان کو مادی اشیاء سے محبت ہونے لگتی ہے اور دنیاوی لذتیں اس کو بھانے لگتیں ہیں تو مادیت پرستی اس کی نفسیات پر حاوی ہو جاتی ہے یہ انسان کی اپنی تخلیق کردہ نہیں ہوتی دراصل وہ جس ماحول میں رہ رہتا ہوتا ہے یہ سب اس کا نتیجہ ہے جس طرح کا ماحول،معاشرہ ہوتا ہے اسی قسم کے اثرات انسان پر مرتب ہوتے ہیں۔ مال جمع کرنا، بینک بیلنس بنانا،وسیع رقبے پر محیط گھر، لگژری گاڑیاں ان سب کی دھن ہر وقت سوار رہتی ہے،جن کے پاس یہ سب ہے وہ اس سے زیادہ کی کوشش میں ہیں ایسی ذہنیت کے مالک لوگ بہتر سے بہترین کی کوشش میں کچھ بھی کر سکتے ہیں،لیکن اپنے سے نچلے طبقے کے لوگوں کی مدد کرنے میں انکی کوئی دلچسپی نہیں۔ اپنا مفاد،خودپرستی ہمہ وقت ذہنوں پر سوار ہے۔ مادیت پرستی اپنی جڑیں اس قدر مضبوط کر چکی ہے کہ ہماری سوچ صر


اوروں کو نصیحت خود میاں فضیحت
 
کل بلاول بھٹو زرداری صاحب نے عاصمہ جہانگیر مرحومہ کے تعزیتی ریفرنس کے حوالے سے گفتگو کی اور اپنی گفتگو میں انہوں نے مرحومہ کی خدمات کو سراہتے ہوئے فرمایا کہ عاصمہ جہانگیر مرحومہ نہ صرف انسان دوست خاتون تھیں بلکہ ہمارے معاشرے کے لئے مشعل راہ تھیں- شائد کہ بلاول بھٹو زرداری صاحب عوام کو یہ باور کرانا چاہتے تھے کہ جس طرح وہ ہر بیان میں آرمی کے خلاف بات کرتی تھیں اس طرح عوام کو بھی ہمت بلند کرکے مرحومہ کی طرح اپنا نام روشن کرنا چاہئے !!!سوری بلاول بھٹو زرداری صاحب ایسا ممکن نہیں بس اتنا کہنا چاہوں گا ضروری نہیں جو موقف آپ رکھتے ہیں ویسا ہی عوام بھی موقف اختیار کرتے ہوں- مزید بلاول بھٹو زرداری صاحب فرماتے ہیں نوزائیدہ حکومت بالکل ناکام ہے اور اصل جمہوری نظام پر کاربند نہیں ہے - ناچیز بلاول بھٹو زرداری سے سوال کرنا چاہتا ہے کہ آپ کے ایوانی دور میں کونسی جمہوریت پنپ رہی تھی ساری کرپشن کے سرے آپ کے دور حکومت سے شروع ہوئے اور تھر کے لو


کلین اینڈ گرین پاکستان کے سلسلہ میں سیمینار، واک اور شجر کاری
 
ڈسکہ(محمدامین رضا)وزیراعظم کے پروگرام کلین اینڈ گرین پاکستان کے سلسلہ میں بلدیہ ڈسکہ میں افتتاحی تقریب کا انعقاد کیا گیا تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اسسٹنٹ کمشنر راﺅ سہیل اختر، ڈی ایس پی محمد غیاث، چیئرمین بلدیہ خواجہ عاطف رضا، سابق ایم پی اے چوہدری صداقت علی ودیگر نے کہا کہ وزیراعظم پاکستان کے ویژن کلین اینڈ گرین پاکستان کیلئے مہم کا آغاز کردیا گیا ہے جس میں تجاوزات کا خاتمہ، صفائی اور شجرکاری شامل ہے اس موقع پر آگاہی واک،اور پودے لگائے گئے جبکہ اسسٹنٹ کمشنر، چیئرمین بلدیہ، ڈی ایس پی ، تحصیل صدر مسلم لیگ خواتین ونگ رفعت شفیع ودیگر نے سڑک پرجھاڑو لگا کر صفائی بھی کی اس موقع پر کونسلرز، علمائے کرام ، صحافیوں اور شہریوں کی کثیر تعداد موجود تھی  


عرق ریزیاں ۔۔۔ تحریر : عرق حیات
 
یہ ایک تلخ حقیقت ہے کہ آج کا دور مکمل طور پر مادیت پرستی میں جکڑا ہوا ہے۔ مادیت پرستی سے مراد مادی اشیاء سے لگاؤ، ظاہری عیش و عشرت کا دلدادہ ہونا۔ جب انسان کو مادی اشیاء سے محبت ہونے لگتی ہے اور دنیاوی لذتیں اس کو بھانے لگتیں ہیں تو مادیت پرستی اس کی نفسیات پر حاوی ہو جاتی ہے یہ انسان کی اپنی تخلیق کردہ نہیں ہوتی دراصل وہ جس ماحول میں رہ رہتا ہوتا ہے یہ سب اس کا نتیجہ ہے جس طرح کا ماحول،معاشرہ ہوتا ہے اسی قسم کے اثرات انسان پر مرتب ہوتے ہیں۔ مال جمع کرنا، بینک بیلنس بنانا،وسیع رقبے پر محیط گھر، لگژری گاڑیاں ان سب کی دھن ہر وقت سوار رہتی ہے،جن کے پاس یہ سب ہے وہ اس سے زیادہ کی کوشش میں ہیں ایسی ذہنیت کے مالک لوگ بہتر سے بہترین کی کوشش میں کچھ بھی کر سکتے ہیں،لیکن اپنے سے نچلے طبقے کے لوگوں کی مدد کرنے میں انکی کوئی دلچسپی نہیں۔ اپنا مفاد،خودپرستی ہمہ وقت ذہنوں پر سوار ہے۔ مادیت پرستی اپنی جڑیں اس قدر مضبوط کر چکی ہے کہ ہماری سوچ صر


غزل ۔۔۔۔ جہاں میں تھا
 
نصیب ہو نہ سکا منتقل ، جہاں میں تھاکہ زخم ہوتے نہ تھے مندمل جہاں میں تھاعجیب ہجر زدہ سی ہوائیں چلتی رہیںخوشی رہی نہ کبھی مستقل جہاں میں تھانہ کوئی جسم نہ سایہ نہ تھی کوئی آہٹجلا پڑا تھا وہاں ایک دل جہاں میں تھانہ جانے مارِ کدورت کہاں سے آ نکلانہ آستیں تھی نہ ہی کوئی بِل جہاں میں تھابُنا گیا تھا وہ منظر ہی درد سےشایدفضا بھی آہوں پہ تھی مشتمل جہاں میں تھابس ایک تو تھا یا پرخار یاد تھی تیرینہ کچھ تھا اور مرے سنگدل جہاں میں تھاتھکا دیا تھا عمر کارِ عشق نے ایسانہیں تھا مجھ سا کوئی مضمحل جہاں میں تھا عابد عمر


السفر وسیلة الظفر
 
عربی کا مشہور مقولہ ہے۔۔"السفر وسلیة الظفر" "سفر کامیابی کی کنجی ہے"۔ صاحب مقولہ عمر بھر اونٹ پر بیٹھ کر صحرا کی خاک پھانکتے رہے ہیں . . یا گھوڑے کی پشت پر سوار دوسروں کو دھول چٹاتے رہے ہیں۔۔۔موصوف کا گذر ساحل پٹی پر موجود کراچی جیسے انہونے شہر سے نہیں ہوا شائد . . اگر ہو جاتا تو اِس مقولہ سے شائد محروم رہ جاتے ہم . . سفر کر کے منزل پا کر کامیابی ضرور ملتی ہو گی . . پر جو سفر کے دوران گذرتی ہے وہ یاران جفا کے بنا کون جانے ہے . . ذندگی یوں تو حوادث کا دوسرا نام ہے . . روز اک انہونی منہ کھولے کھڑی نظر پڑتی ہے . . کچھ رب کی دِین ہوتی ہیں کچھ بندا اپنے شوق ہاتھوں حاصل کرتا ہے . . ایسا ہی کچھ ہوا ہمارے ساتھ . . ہم اُس شہر میں پِدارے جہاں صبح کے وقت ریڑھی پر گولا گنڈا بکتا ہے اور رات اُسی پر سوپ بِکتا دیکھائی دیتا ہے . . . محفلِ یاراں جوبن پر تھی کہ ناجانے دل میں کیا آئی ؟ ہم ضد لگا بیٹھے میرے کو کراچی کی لوکل بس میں سفر کرنا ہے . .یار دوستوں نے بہت


مشترکہ انٹرويو
 
مشترکہ انٹرويو سوال نامہ توصیف ترنل ہانگ کانگ سوال نمبر 1اردو ادب کی دنیا میں آپ کے کتنے شاگرد ہیں اور آپ کس کے شاگرد ہیں سوال نمبر 2شاعروں کی دنیا میں کتنے شعرا آپ کو شاعر مانتے ہیں سوال نمبر 3 کیا آپ دنیا کی کسی ایک ادبی تنظیم کے ساتھ مخلص ہو سکتے ہیں مآ سوائے جو آپ نے خود بنائی ہیں سوال نمبر 4تنقید کرنا آپ اپنا فرض سمجھتے ہیں اور ایک اچھے شعر پر داد دینے کے لئے ہزار بار سوچتے ہیں آخر کیوںسوال نمبر 5 بہت سارے لوگ شاعر نہیں ہیں مگر وہ شاعر ہونے کا دعویٰ کرتے ہیں آخر کس لئے سوال نمبر 6آپ علمِ عروض کے بارے میں کیا جانتے ہیں سوال نمبر 7آجکل جو گیت لکھے جا رہے ہیں ان کے افاعیل کیا ہیں سوال نمبر 8جب آپ اپنے معاشرے کی سچائی کو بیان نہیں کر سکتے تو شاعر ی کرنے کی کیا ضرورت ہے سوال نمبر 9کچھ شعرا نے بڑی پھوڑ بنائی ہوئی ہے مگر اپنے اوپر تنقید سے بہت گھبراتے ہیں آخر کیوں سوال نمبر 10کیا آپ اردو ادب کے فروغ کے لئے کام کر رہے ہیں تو بتائیں پھر وہ کیس


ماما ماما مجھ کو بچا لو
 
ON KASUR INCIDENT August 2017ننھا سا پیارا سا بچہ رات کے پچھلے پہر میں ڈر کراٹھ کر بیٹھ گیا ہےماما ماما .....مجھ کو بچا لومجھ کو کنویں میں لٹکا دیں گےکاٹن کا جو کرتا ماما پیار سے آپ نے سی کے دیا ہے اس کو داغ لگا دیں گے پھر مجھ کو جھنجھوڑیں گے پھر مجھ کو تڑپا دیں گے ماما ماما ........مجھ کو چھپا لو جلادوں سے مجھ کو بچا لو ماما ماما بات سنو نا میں اسکول نہیں جاؤں گا دوست میرے طعنے دیں گے کیسے پڑھوں گا کیسے بڑھوں گا روشن نام میں کیسے کروں گا ماما میرا جرم بتاؤ جس کی سزا میں نے پائی ہے اب تو ہر اک سانس میں جیسے رسوائی ہی رسوائی ہے  ماما یہ حاکم سے پوچھو کب حالات اچھے ھوں گے کچھ تو وہ اقدام کریں گے ان کے بھی تو بچے ھوں گے؟؟؟عابد عمر


mandir ki kahani mere zubani (safar nama)
 
                           مندر کی کہانی میری زبانی(سفر نامہ) تحریر: حمیدہ گل محمد حسب معمول روزانہ کی طرح کل بھی یونیورسٹی کے لئے گھر سے روانہ ہوئی۔جامع پہنچی اتنے میں استاد محترم کلاس میں وارد ہوئے جب کلاس ختم ہوئی تو موبائل پر نظر دوڑائی۔ میرے ایک سینئر اور عزیز دوست حسنین رسول کا پیغام موصول ہوا کہ کہاں ہو؟میں نے کہا کلاس میں تو پھر میسج آیا کہ کلاس کے بعد ملنا میں نے کہا اوکے۔اتنے میں دوسری ٹیچر آئی میں کلاس لینے میں مگن ہوگئی وہ کلاس 1بجے کے قریب اختتام پذیر ہوئی۔حسنین کے ساتھ اسی کی کلاس میٹ شاریہ بھی ساتھ تھی۔ میں شاریہ،حسنین،ثناء اور رُوسہ چائے کی غرض سے ڈھابے کی طرف روانہ ہوئے۔وہاں چائے پی حسنین اورشاریہ سے کافی دنوں بعد ملاقات ہوئی تھی تو ڈھیر ساری باتیں کی۔ابھی گفتگو چل ہی رہی تھی کہ میرے ہم جماعت محسن بن رشید کی کال آئی میں نے اسلام و علیکم کہہ کر کال اٹینڈ کی تو وہ کہنے لگا کہاں ہو؟ میں نے بتایا کہ


عالمی مشاعرہ بعنوان بچوں کی نظمیں
 
عالمی مشاعرہ بعنوان بچوں کی نظمیںمنفردادارے کا منفرد پروگرامادارہ،عالمی بیسٹ اردو پوئیٹری کی جانب سے 175 ویں مشاعرے کا اہتمام کیا گیا ہے,جس میں پوری دنیا سے شامل ہونے والے شعراء سکول کے بچوں پر لکھا کلام بعنوان بچوں کی نظمیں کے موضوع پر لکھ سکتے ہیں پاکستان اور ہندوستان کے شعراء کرام کے ساتھ ساتھ دنیا بھر کے شعراء و شاعرات سے درخواست ہے کہ وہ اپنے ذوق و شوق کا مظاہرہ کریں اور بڑھ چڑھ کر اس پروگرام میں حصہ لیں۔ مگر جن شعرا کے اشعار معیاری ہوں گے صرف وہی پروگرام کا حصہ بن سکتے ہیں ۔ جس کے لئے آپ چند اشعار پیش کر نے ہوں گے ۔منجانب انتظامیہ ادارہ========================پبلشیر اینڈلائیو رپورٹنگ توصیف ترنل ہانگ کانگ ناقد ین شہزاد نیّر پاکستان شفاعت فہیم بھارت========================صدارت17-مصطفیٰ دلکش بھارتمہمانانِ خصوصی 15-ڈاکٹر معظم علی خان16-عاطف جاوید عاطف لاہورمہمانانِ اعزازی 13-صابر جاذب لیہ پاکستان14-فانی ایاز گولوی رام بن کشمیر پروگرام آئیڈیا


*موبائل فون کی تصدیق*
 
تمام موبائل یوزر ضرور پڑھیں پاکستان ٹیلی مواصلات اتھارٹی (پی ٹی اے) 20 اکتوبر 2018 سے پہلے اپنے سمارٹ فونز اور GSM ڈیوائسز کی تصدیق کرنے کے لئے تمام موبائل استعمال کنندگان کو ایس ایم ایس بھیج رہا ہے۔اگر کسی کو ایس ایم ایس (sms) نہ ملے ، تب بھی وہ اپنی GSM ڈیوائسز کی خود سے تصدیق کر سکتا ہے۔پی ٹی اے کے مطابق صرف تصدیق کردہ موبائل فون اور GSM ڈیوائسز 20 اکتوبر کے بعد فعال ہونگے اور دیگر تمام موبائل فون کو بلاک کردیا جائے گا.پی ٹی اے نے سختی سے کہا ہے کے صرف (PTA) سے منظور شدہ موبائل اور GSM ڈیوائسز خریدیں اور استعمال کریں۔موبائل فون اور GSM ڈیوائسز کی تصدیق کے لیے تین طریقے ہیں۔ایس ایم ایس کے ذریعےایپلیکیشن کے ذریعےویب سائٹ کے ذریعےایس ایم ایس کے ذریعے تصدیق کرنے کے لیے اپنے موبائل کا IMEI نمبر میسج میں لکھ کر 8484 پر ایس ایم ایس کریں۔اپنا IMEI نمبر چیک کرنے کے لیے اپنے موبائل سے *#06# ڈائل کریں۔موبائل ایپلیکیشن کے ذریعے تصدیق کرنے کے لیے گوگل پلے سٹو


شاداب نے آسٹریلیا کے خلاف ٹیسٹ میچ سے قبل بڑا جھٹکا دے دیا۔
 
شاداب انجری کے سبب آسٹریلیا کے خلاف پہلے ٹیسٹ سے باہر نوجوان پاکستانی لیگ اسپنر شاداب خان گروئن انجری سے اب تک صحتیاب نہیں ہو سکے اور آسٹریلیا کے خلاف پہلے ٹیسٹ میچ سے باہر ہو گئے ہیں۔ڈان نیوز کے مطابق  شاداب ایشیا کپ کے دوران انجری کا شکار ہوئے تھے اور تاحال انجری سے صحتیاب نہیں ہو سکے جس کے سبب وہ آسٹریلیا کے خلاف اتوار سے شروع ہونے والے پہلے ٹیسٹ میچ میں شرکت نہیں کر سکیں گے۔ نوجوان اسپنر کی انجری کے سبب پاکستان کا یاسر شاہ سمیت میچ میں دو لیگ اسپنر کھلانے کا منصوبہ بھی ناکام ہو گیا ہے اور اب ممکنہ طور پر آل راؤنڈر بلال آصف کو ڈیبیو کرائے جانے کا امکان ہے۔ شاداب کی انجری کے ساتھ ہی تجربہ کار آل راؤنڈر محمد حفیظ کی ٹیم میں شمولیت بھی یقینی ہو گئی جنہیں ابتدائی طور پر ٹیسٹ اسکواڈ میں شامل نہیں کیا گیا لیکن ماہرین کی جانب سے تنقید کے بعد انہیں ٹیسٹ اسکواڈ کا حصہ بنا لیا گیا۔ یاد رہے کہ پاکستان اور آسٹریلیا کے درمیان 2014 میں متح


فیس بک پیج

مقبول ترین

تعارف / انٹرویو

دلچسپ و عجیب

اسلامی و سبق آموز

نیوز چینلز
قومی اخبارات
اردو ویب سائٹیں

کورل ڈرا - 2018
اشتہارات

آپکی بات ڈاٹ کام آپ کی اپنی ویب سائٹ ہے ، ہمارے ساتھ رہنے کا شکریہ
تمام اشاعت کے جملہ حقوق بحق ادارہ آپکی بات محفوظ ہیں۔
Copyright © 2018 apkibat. All Rights Reserved